جہنم کی آگ سے براءَ ت نامہ :

جہنم کی آگ سے براءَ ت نامہ :

Advertisement

حضرت سیِّدُنا عمر بن عبدالعزیز رضی اللہ تعالیٰ عنہ رات کے وقت غیر آباد مساجد میں تشریف لے جاتے اور وہاں نماز ادا کرتے رہتے جس سے اللہ عَزَّوَجَلَّ خوش ہوتا۔جب سحری کاوقت ہوتا تو پیشانی زمین پر رکھ کر رُخسار مِٹی پر رگڑتے ہوئے طلوعِ فجر تک روتے رہتے۔ ایک رات حسب ِ معمول جب آپ نے ایسا کیا اور پھر جب فارغ ہو کر سر اٹھایا تو ایک سبز پرچہ ملا جس کا نور آسمان تک پھیلاہوا تھا۔ اس پر لکھا تھا: ”ھٰذِہٖ بَرَاءَ ۃٌ مِّنَ النَّارِ مِنَ الْمَلِکِ الْعَزَیْزِ لِعَبْدِہٖ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ الْعَزِیْزِ” یعنی خدائے مالک وغالب اللہ عَزَّوَجَلَّ کی طرف سے یہ ”جہنم کی آگ سے بَرَاءَ تْ نامہ ”ہے جو اس کے بندے عمر بن عبدالعزیز کو عطا ہوا ہے۔”

(تفسیر روح البیان، الدُّخان، تحت الایۃ۳،ج۸، ص۴0۲)

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!