ہمیں عَلامات کیوں نظر نہیں آتیں؟

ہمیں عَلامات کیوں نظر نہیں آتیں؟

میٹھے میٹھے اِسلامی بھائیو! شبِ قَدْر کی مُتَعَدَّدعَلامات کا ذِکْر گُزرا ۔ ہمارے ذِہن میں یہ سُوال اُبھر سکتا ہے کہ ہماری عُمر کے کافی سال گُزرے ہر سال شبِ قَدر آتی رہتی ہے تو کیا وجہ ہے کہ ہمیں کبھی اِس کی عَلامات نظر نہیں آتیں؟اِ س کے جواب میں عُلَمائے کِرام رَحِمَہُمُ اللہُ تعالٰی فرماتے ہیں ،اِن باتوں کا عِلْم ہر ایک کو نہیں ہوسکتا کیوں کہ اِن کا تَعَلُّق کَشف و کَرامت سے ہے۔اِسے تَو وُہی دیکھ سکتا ہے جس کو بَصِیرت (یعنی قَلْبِی نَظَر)کی نِعمَت حاصِل ہو۔ہر وَقت مَعصِیَت کی نُحُوست میں لَت پَت رہنے والا گُنہگار اِنسان اِن نظّاروں کوکیسے دیکھ سکتا ہے؟ ؎
آنکھ والا تِرے جوبن کا تماشہ دیکھے 
         دِیدہ کور کو کیا آئے نظر کیا دیکھے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *