Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

نماز میں درمیان سے سورت چھوڑنے کا حکم

درمیان سے سورت چھوڑنے کا حکم

مسئلہ۱۷: درمیان میں ایک سورۃ چھوڑ کر پڑھنا مکروہ ہے لیکن اگر درمیان کی سورۃ پہلی سے بڑی ہو تو چھوڑ سکتا ہے۔ مثلاً وَ التِّیْنِ کے بعد اِنَّاۤ اَنْزَلْنٰهُ پڑھنے میں حر َج نہیں اور اِذَا جَآءَ کے بعد قُلْ هُوَ اللّٰهُ پڑھنا نہ چاہیے۔ (درمختار وغیرہ)
مسئلہ۱۸: بہتر یہ ہے کہ فرض نمازوں میں پہلی رکعت کی قرأ ت دوسری رکعت سے کچھ زیادہ ہو اور فجر میں تو پہلی رکعت میں دو تہائی اور دوسری میں ایک تہائی ہو۔ (عالمگیری)
مسئلہ۱۹: جمعہ و عیدین کی پہلی رکعت میں سَبِّحِ اسْمَ دوسری میں هَلْ اَتٰىكَ پڑھنا سنت ہے۔ (درمختا ر، ردالمحتار)
مسئلہ۲۰: سنتوں اور نفلوں کی دونوں رکعتوں میں برابر کی سورتیں پڑھے۔ (منیہ)
مسئلہ۲۱: نوافل کی دونوں رکعتوں میں ایک ہی سورت پڑھنا یا ایک رکعت میں اِسی سورۃ کو بار بار پڑھنا بلا کراہت جائز ہے۔ (غنیۃ)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!