Ghazal

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *