نعت

__________(نعتِ رسولِ اعظم)__________
         صٙلّٙی اللہ تعالیٰ عٙلٙیہِ و آلِہ وٙ سٙلّٙمخـوبرو  تجھ ســا  نہیں دہر میں دُوجـا؛  کاغذ
اِســمِ ســرکار ، تِـرے  رُخ  کا  ہـے غــازہ؛  کاغذ حـشـر  میں  چمکے گا تو  مِثلِ زُجـاجہ؛  کاغذ
تجھ  پہ  مَـرقُوم  ہـے  نعـتِ شٙـہِ بٙطـحا؛  کاغذ تیرے  بـوسے  لیا  کرتی ہـے سـدا  نـوکِ قـــلم
نعت  کے فَـیض  سے  چـمکا  تِـرا مـاتھا؛  کاغذ مجھ کــو کرنی ہـے رَقَـــم نعتِ شہنشـاہِ اُمَــم
کَُـوے طـیبہ  سے  مِـرے پاس تـو آ جــا؛  کاغذآرزو ہـے کـہ  قــلم  دے  مجھے  شـاخِ طُــوبیٰ
“نعـت  لکھنے  کو لیے  بیٹھـا ہوں کورا؛  کاغذ”بڑھ  گیا  رُتبـہ  تِـرا  اِســمِ  مُـحَمَّـد کے طُــفَیل
اِس سے پہلے تھـا تو مـعمولی سـا سادہ؛  کاغذ ہو کے آ جـــا تو  مـدینے  سے  ذرا  بُلـبُلِ  فِــکـر
تـا کہ  ہو  جــــاۓ  مُـعَـطَّـر  مِـرا خـــامہ، کاغذحُسـنِ یوسـف ، دَمِ عِیـسیٰ ، یدِ بٙیضــا  کا  ہـے
اپنے  سینے  پـہ  سـجــاۓ  ہوے  تٙمـغٙــہ؛  کاغذجـب بھی  لگ جاتا ہـے گُسـتاخِ پَیَمـبَر کے ہاتھ
ہو کے  پھرتا ہـے  زمانے  میں تو  رُسـوا؛  کاغذ زائـر طـیبہ ! یہی تجھ سے ہـے راحتؔ کا سوال
لَـوٹ  آنــا  تـو  وہــاں  کا  مـجھـے  دینا؛  کاغذ________از  راحتؔ انجــم (ممبئی)________
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔9892020938۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Advertisement
Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!