پاسِ اَنفاس

پاسِ اَنفاس 

  انہیں  پانچوں  طریقوں  سے جسے چاہے ہر سانس کی آمدورفت میں  کھڑے بیٹھے،چلتے پھرتے،وضو بے وضو بلکہ قضائے حاجت کے وقت بھی ملحوظ رکھے یہاں  تک کہ اس کی عادت پڑ جائے اور تکلف کی حاجت نہ رہے اب سوتے میں  بھی ہر سانس کے ساتھ ذکر جاری رہے گا۔
Advertisement
Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!