منقبت در شان حضور شیخ الاسلام

منقبت در شان حضور شیخ الاسلام

عرس سید ہے یہ اس کا کیا پوچھنا
رحمتوں کا برسنا ہر اک آن ہے
جتنے مہمان یہاں پرہیں آئے ہوے
آج تو سب پہ سید کا فیضان ہے
وہ جو ہوتا ہے سو سال میں کردیا
سب کے ذہنوں میں تفسیر کو بھر دیا 
ہم غلاموں کو حمزہ حسن دے دیا
اب تو سمجھو کہ مدنی کی کیا شان ہے
یہ حقیقت ہے کوئی کہانی نہیں
شیخ الاسلام کا کوئی ثانی نہیں 
مانتے ہیں جسے سارے عرب وعجم
سچ کہوں سنیت کی یہ پہچان ہے
سر غریبوں کے خم ہیںامیروں کے خم
سر ادیبوں کے خم ہیں خطیبوں کے خم 
ہاتھ باندھے کھڑے ہیں سبھی محترم
میرے مدنی میاں کی عجب شان ہے
ہے خدا کا مرے نور نور نبی
اور نبی کا وہی نور آل نبی  
ایسی نسبت سے یوسفؔکہے کیوں نہ اب
ہاں میرا پیر بھی نور رحمٰن ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر اب کسی کے در پہ جھکایا نہ جائے گا
سید تمہارے در سے اٹھایانہ جائے گا
ہوگی نہ کامیاب یہ باطل کی کوششیں
دامنِ مدنی ہم سے چھڑایانہ جائے گا
ہیرا ہے وہ مدنی اشرف سمناں کے کان کا
دنیا کے کسی کان میں یہ پایانہ جائے گا
اکبر جسے منا نہ سکا الف ثانی سے
وہ آج بھی مدنی سے منایا نہ جائے گا
یوسفؔ رہے گا دین نبی جب تلک عیاں
احسانِ اہل بیت بھلایانہ جائے گا

از: جناب محمدیوسفؔ اشرفی رائے پوری،

 چھتیس گڑھ۔برادر زادئہ انور رائپوری 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *