نعت

تو امیرِ حرم ، میں فقیرِ عجم
تیرے گُن اور یہ لب، میں طلب ہی طلب
تو عطا ہی عطا ۔ تُو کُجا مَن کُجاتو ابد آفریں، میں ہوں دو چار پل
تو یقیں میں گماں، میں سخن تو عمل
تو ہے معصومیت، میں نری معصیت
تو کرم میں خطا ۔ تو کجا من کجاتو ہے احرامِ انوار باندھے ہوئے
میں دُرودوں کی دستار باندھے ہوئے
کعبۂِ عشق تو، میں تیرے چار سُو
تو اثر میں دعا ۔ تو کجا من کجاتو حقیقت ہے، میں صرف احساس ہوں
تو سمندر، میں بھٹکی ہوئی پیاس ہوں
میرا گھر خاک پر اور تیری رہگزر
سدرۃ المنتہٰی ۔ تو کجا من کجامیرا ہر سانس تو خوں نچوڑے میرا
تیری رحمت مگر دل نہ توڑے میرا
کاسۂِ ذات ہوں، تیری خیرات ہوں
تو سخی میں گدا ۔ تو کجا من کجاڈگمگاؤں جو حالات کے سامنے
آئے تیرا تصور مجھے تھامنے
میری خوش قسمتی میں تیرا امتی
تو جزا میں رضا ۔ تو کجا من کجامیرا ملبوس ہے پردہ پوشی تیری
مجھ کو تابِ سخن دے خموشی تیری
تو جلی میں خفی، تو اٹل میں نفی
تو صلہ میں گلہ ۔ تو کجا من کجادوریاں سامنے سے جو ہٹنے لگیں
جالیوں سے نگاہیں لپٹنے لگیں
آنسوؤں کی زباں ہو میری ترجماں
دل سے نکلے صدا ۔ تو کجا من کجا
​مظفر وارثی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *