Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

قہ حنفیہ کی تدوین اور اُس کی شہرت اور مقبولیت اور اُس پر اجماع

بسم اﷲ الرحمن الرحیم
اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِِّ الْعٰلمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَ السَّلاَمُ عَلیٰ رَسُوْلِہِ مُحَمَّدٍ وَّاٰلِہِ وَ اَصْحَابِہِ اَجْمَعِیْن۔
اما بعد ! اب تھوڑا سا حال فقہ حنفیہ کی تدوین اور اُس کی شہرت اور مقبولیت اور اُس پر اجماع ہونے کا بھی سُن لیجئے ۔
امام صاحب کی پیدائش ۸۰؁ھ (اَسی ) ہجری میں ہے ،جو صحابہ کی موجودگی اور اعلیٰ درجہ کی برکت کا زمانہ تھا اور انتقال ۱۵۰؁ھ (ایک سو پچاس ) ہجری میں ہوا ، اس ستر سال کی عمر کا ایک بڑا حصہ آپ نے تحصیل علم میں صرف کیا ، اُس کے بعد حماد بن سلیمان کے حلقہ میں فقہ حاصل کرنے کی غرض سے گئے ، چنانچہ ’’تبییض الصحیفہ ‘‘میں امام سیوطی ؒ نے لکھا ہے کہ امام صاحب فرماتے ہیں: ہر روز میں اُن کے حلقہ میں جایا کرتا اور جو کچھ اُن سے سنتا یاد رکھتا ، جب دوسرے روز وہ پڑھے ہوئے سبق کا اعادہ کراتے تو دوسرے ہمدرس اکثر خطا کرتے اور میں بے کم و کاست بیان کر دیتا ، اس وجہ سے حمادؒ نے حکم دیا کہ صدر حلقہ میں سوائے ابو حنیفہ کے کوئی نہ بیٹھے ۔ دس سال تک یہ حاضر باشی اور استفادہ رہا ، ایک روز میرے نفس نے خواہش کی کہ تفقہ میں بہرہ کافی حاصل ہوگیا ہے اس لئے اپنا حلقہ علٰحدہ بنالیاجائے ، چنانچہ اس ارادہ سے میں نکلا ، جب مسجد میں داخل ہوا اور حماد رحمۃ اللہ علیہ کو دیکھا تو جرأت نہ ہوئی کہ استاذ کے مقابلہ میں خودسری کا دعویٰ کروں ؛ چنانچہ حسب عادت، شیخ کے حلقہ میں بیٹھ گیا ۔ قضارا اُسی رات اُن کو خبر پہونچی کہ بصرہ میں اُن کے کوئی قرابتدار تھے اُن کا انتقال ہوا اور سوائے اُن کے کوئی دوسرا وارث نہیں ، یہ سنتے ہی مجھے اپنا جانشین کر کے وہ روانہ ہوگئے اور دو مہینے تک میں اُن کی خدمت کو انجام دیتا رہا ۔ اس عرصہ میں ساٹھ مسئلے ایسے پیش ہوئے کہ اُن کا حکم میں نے سنا نہ تھا ، اُن کا جواب تو دے دیا مگر وہ لکھ رکھا ۔ جب وہ واپس تشریف لائے ، میں نے وہ مسائل اور اپنے

جوابات پیش کئے ، انہوں نے چالیس مسئلوں میں اتفاق کیا اور بیس مسئلوں میں مخالفت کی ، اُس کے بعد میں نے قسم کھائی کہ اب اُن کے حلقہ کو کبھی نہ چھوڑوں گا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!