اسیروں کے مشکل کشا غوث اعظم رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

اسیروں کے مشکل کشا غوث اعظم رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

اسیروں کے مشکل کشا غوث اعظم
فقیروں کے حاجت روا غوث اعظم
                             گھرا ہے بلاؤں میں بندہ تمہارا
                              مدد کے لئے آؤ یا غوث اعظم
Advertisement
ترے ہاتھ میں ہاتھ میں نے دیا ہے
ترے ہاتھ ہے لاج یا غوث اعظم
                               مریدوں کو خطرہ نہیں بحر غم سے
                                کہ بیڑے کے ہیں ناخدا غوث اعظم
تمہیں دکھ سنو اپنے آفت زدوں کا
تمہیں درد کی دو دوا غوث اعظم
                                 بھنور میں پھنسا ہے ہمارا سفینہ
                                 بچا غوث اعظم بچا غوث اعظم
جو دکھ بھر رہا ہوں جو غم سہ رہا ہوں
کہوں کس سے تیرے سوا غوث اعظم
                                  زمانے کے دکھ درد کی رنج و غم کی
                                 ترے ہاتھ میں ہے دوا غوث اعظم
اگر سلطنت کی ہوس ہو فقیرو
کہو شیأا للہ یا غوث اعظم
نکالا ہے پہلے تو ڈوبے ہوؤں کو ۔
  اور اب ڈوبتوں کو بچا غوث اعظم ۔
۔ گرانے لگی ہے مجھے لغزش پا
۔ سنبھالو ضعیفوں کو یا غوث اعظم
مری مشکلوں کو بھی آسان کیجئے ۔
کہ ہیں آپ مشکل کشا غوث اعظم ۔
۔ کہے کس سے جا کر حسن اپنے دل کی
۔ سنے کون تیرے سوا غوث اعظم   
                                        (ذوق نعت،صفحہ نمبر۱۰۷)
Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!