منقبت آقائے کرم حضورغوث اعظم رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ

منقبت آقائے کرم حضورغوث اعظم
رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ

واہ کیا مرتبہ اے غوث ہے بالا تیرا
اونچے اونچوں کے سروں سے قدم اعلیٰ تیرا
                       سر بھلا کیا کوئی جانے کہ ہے کیسا تیرا
                         اولیاء ملتے ہیں آنکھیں وہ ہے تلوا تیرا
Advertisement
کیا دبے جس پہ حمایت کا ہو پنجہ تیرا
شیر کو خطرے میں لاتا نہیں کتا تیرا
                          تو حسینی حسنی کیوں نہ محی الدیں ہو
                           اے خضر مجمع بحرین ہے چشمہ تیرا
قسمیں دے دے کے کھلاتا ہے پلاتا ہے تجھے
پیارا اللہ تیرا چاہنے والا تیرا
                            مصطفےٰ کے تن بے سایہ کا سایہ دیکھا
                                جس نے دیکھا مری جاں جلوئہ زیبا تیرا
ابن زہرا کو مبارک ہو عروس قدرت
قادری پائیں تصدق مرے دولہا تیرا
                            کیوں نہ قاسم ہو کہ تو ابن ابی القاسم ہے
                            کیوں نہ قادر ہو کہ مختار ہے بابا تیرا
بحر و بر، شہر و قری سہل و حزن دشت و چمن
کون سے چک پہ پہنچتا نہیں دعوی تیرا
                         فخر آقا میں رضا اور بھی اک نظم رفیع
                        چل لکھا لائیں ثناء خوانوں میں چہرہ تیرا
                                                 (حدائق بخشش صفحہ نمبر۱۲)
Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!