Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

سود کھانے کی ممانعت

سود کھانے کی ممانعت

یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا لَا تَاْكُلُوا الرِّبٰۤوا اَضْعَافًا مُّضٰعَفَةً۪- وَّ اتَّقُوا اللّٰهَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُوْنَۚ(۱۳۰)
ترجمۂ کنزُالعِرفان : اے ایمان والو! دُگنا دَر دُگنا سود نہ کھاؤ اور اللہ سے ڈرو اس امید پر کہ تمہیں کامیابی مل جائے ۔ (اٰل عمران : ۱۳۰)
( لَا تَاْكُلُوا الرِّبٰۤوا اَضْعَافًا مُّضٰعَفَةً۪- : دُگنا دَر دُگنا سود نہ کھاؤ ۔) اس آیت میں سود کھانے سے منع کیا گیا اور اسے حرام قرار دیا گیا ۔ زمانۂ جاہلیت میں سود کی ایک صورت یہ بھی رائج تھی کہ جب سود کی ادائیگی کی مدت آتی، اگر اس وقت مقروض ادا نہ کرپاتا تو قرضخواہ سود کی مقدار میں اضافہ کردیتا اور یہ عمل مسلسل کیا جاتا رہتا ۔ اسے دُگنا دَر دُگنا کہا جارہا ہے ۔

سود سے متعلق وعیدیں :

سود حرامِ قطعی ہے ، اسے حلال جاننے والا کافر ہے ۔ قرآن و حدیث میں اس کے متعلق سخت وعیدیں بیان ہوئی ہیں ۔ سورۂ بقرہ کی آیت275 ، 276 ، 278 میں بھی سود کی حرمت کا بیان موجود ہے اور حدیث میں ہے ۔
(1)… حضرت جابر بن عبداللہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ، حضور سیدُ المرسلین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے سود کھانے والے ، کھلانے والے ، سود لکھنے والے اور اس کی گواہی دینے والے پر لعنت فرمائی اور فرمایا کہ یہ سب اس گناہ میں برابر ہیں ۔ (مسلم، کتاب المساقاة والمزارعة، باب لعن اٰکل الرباومؤکله، ص ۸۶۲، الحدیث : ۱۰۶(۱۵۹۹))
(2)… حضرت عبداللہ بن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ، حضورِ اقدس صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’سود کا گناہ 73درجے ہے

، ان میں سب سے چھوٹا یہ ہے کہ آدمی اپنی ماں سے زناکرے ۔ (مستدرک، کتاب البیوع، انّ اربی الربا عرض الرجل المسلم، ۲ / ۳۳۸، الحدیث : ۲۳۰۶)
(3)… حضرت انس بن مالک رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ، سرورِکائنات صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’سود کا ایک درہم جو آدمی کو ملتا ہے اس کے 36 بار زنا کرنے سے زیادہ بُرا ہے ۔ (شعب الایمان، الثامن والثلاثون من شعب الایمان، ۴ / ۳۹۵، الحدیث : ۵۵۲۳)
(4)… حضرت ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ، رسولُ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’معراج کی رات میرا گزر ایک ایسی قوم پر ہوا جن کے پیٹ گھروں کی مانند بڑے تھے اور ان میں سانپ تھے جو باہرسے نظر آ رہے تھے ، میں نے حضرت جبرئیل عَلَیْہِ السَّلَام سے ان لوگوں کے بارے میں دریافت فرمایا تو انہوں نے عرض کی : یہ وہ لوگ ہیں جو سود کھاتے تھے ۔ (ابن ماجه، کتاب التجارات، باب التغلیظ فی الربا، ۳ / ۷۱، الحدیث : ۲۲۷۳)
اس آیت سے یہ بھی معلوم ہوا کہ گناہِ کبیرہ کرلینے سے آدمی ایمان سے خارج نہیں ہوتا کیونکہ یہاں سود کی حرمت بیان کرتے ہوئے لوگوں سے ’’اے ایمان والو‘‘ کہہ کر خطاب کیا گیا ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!