لَمْ یَاتِ نَظِیْرُکَ فِیْ نَظَرٍ

لَم(1) یَاتِ نَظِیْرُکَ فِیْ نَظَرٍمثلِ تو نہ شُد پیدا جانا
جگ راج کو تاج تورے سرسو ہے تجھ کو شہ دَوسَرا جانا
اَلْبَحْر(2)عَلَا وَالْمَوْجُ طَغٰی مَن بیکس وطوفاں     ہوشرُبا
منجدھار میں     ہوں     بگڑی ہے ہوا موری نیَّا پار لگا جانا
یَاشَمْس(3)نَظَرْتِ اِلٰی لَیْلِیْ چو بطیبہ رسی عرضے بکنی
توری جوت کی جھل جھل جگ میں    رَچی مری شب نے نہ دن ہوناجانا
لَکَ(4)بَدْرٌ فِی الْوَجْہِ الْاَجْمَلْ خط  ہالۂ مہ  زُلف اَبر ِ اَجل
تورے چندن چندر پرو کنڈل رحمت کی بھرن برسا جانا
اَنَا(5) فِیْ عَطَشٍ وَّسَخَاکَاَ تَمْ  اے گیسوئے پاک اے ابرِ کرم
برسن ہارے رم جھم رم جھم دو بوند اِدھر بھی گرا جانا
یَاقَافِلَتِی(1)زِیْدِیْ اَجَلَکْ رحمے برحَسْرتِ تِشْنہ لَبَک
مورا جِیَرا لَرجے دَرَک دَرَک طیبہ سے ابھی نہ سنا جانا
وَاھًا(2)لِسُوَیْعَاتٍ ذَھَبَتْ آں     عَہْدِ حُضُورِ بارگہت
جب یاد آوَت موہے کر نہ پرت دردا وہ مدینہ کا جانا
اَلْقَلْبُ(3)شَجٍ وَّالْھَمُّ شُجُوْں     دِل زَارچُناں     جاں     زیر چُنُوں 
پت اپنی بپت میں     کاسے کہوں     مرا کون ہے تیرے سوا جانا
اَلرُّوْحُ(4)فِدَاکَ فَزِدْ حَرْقَا یَک شُعْلہ دِگر بَرزَن عِشْقا
مورا تن من دھن سب پھونک دیا یہ جان بھی پیارے جَلاجانا
بس خامۂ خام نوائے رضاؔ نہ یہ طرز مری نہ یہ رنگ مِرا
اِرشادِ اَحِبَّا ناطِق تھا ناچار اِس راہ پڑا جانا
٭…٭…٭…٭…٭…٭
________________________________
1 – ۔۔۔ ترجمہ: حضور کا نظیر کسی کو نظر نہ آیا۔   
2 – ۔۔۔ ترجمہ: سمندر اونچا ہوا اور موجیں     طغیانی پر ہیں    ۔ 
3 – ۔۔۔ ترجمہ: اے آفتاب تو نے میری رات دیکھی۔ اِس میں     اشارہ ہے کہ میری رات آفتاب کے سامنے بھی رات ہی رہی ۔۱۲ 
4 – ۔۔۔ ترجمہ: حضور کیلئے سب سے زیادہ خوب صورت چہرہ میں     ایک چودھویں     رات کا چاند ہے ۔۱۲ 
1 – ۔۔۔ ترجمہ: اے میرے قافلے اپنے قیام کی مدت زیادہ کر ۔۱۲
2 – ۔۔۔ ترجمہ: آہ افسوس وہ چند قلیل گھڑیاں     کہ گزر گئیں     ۔۱۲
3 – ۔۔۔ ترجمہ: دل زخمی ہے اور پریشانیاں     رنگ رنگ کی ہیں    ۔
4 – ۔۔۔ ترجمہ: جان تیرے قربان اپنی سوزش زیادہ کر۔